سکھر، واٹر کمیشن سربراہ کا سپلائی اسکیموں کادورہ، تالابوں کا معائنہ

86

سکھر (آن لائن) عدالت عظمیٰ کے واٹر کمیشن کے سربراہ سکھر پہنچ گئے، شہر کی مختلف واٹر سپلائی اسکیموں کادورہ، پانی کے تالابوں کا معائنہ، صورتحال پر عدم اطمینان کا اظہار، شہریوں کو گندے پانی کی فراہمی پر افسران اور میئر پر برس پڑے۔ تفصیلات کے مطابق عدالت عظمیٰ کی جانب سے سندھ میں شہریوں کو سپلائی کیے جانے والے پانی کی صورتحال کا جائزہ لینے کے لیے تشکیل دیے گئے واٹر کمیشن کے سربراہ جسٹس (ر) امیر مسلم ہانی نے نواب شاہ اور خیرپور کے بعد سندھ کے تیسرے بڑے شہر سکھر پہنچ کرشہر کی مختلف واٹر سپلائی اسکیموں کا دورہ کیا اور وہاں پر پانی کے تالابوں کا معائنہ کیا سکھر کے شہرکو مین سپلائی کرنے والی بندر روڈ واٹر سپلائی اسکیم کے دورے پر وہاں پر پانی کے تالابوں کی صورتحال پر سخت برہمی کا اظہار کیا اور وہاں موجود میئر سکھر ارسلان شیخ اور ضلعی انتظامیہ کے افسران پر برس پڑے اور ان سے کہا کہ کیا ایسا پانی شہریوں کو فراہم کیا جاتا ہے جو انسانوں تودور جانوروں کے استعمال کے قابل بھی نہیں ہے جب تالاب صاف نہیں ہیں تو شہریوں کو صاف پانی کیسے فراہم کیا جاتا ہے اور اگر یہ پانی شہریوں کو فراہم کیا جاتا ہے تو اس سے اچھا ہے ان کو پانی فراہم ہی نہ کیا جائے اور جب تک یہ پانی آپ کے اور ہمارے پینے کے لائق ہی نہیں ہوجاتا کم سے کم اس وقت تک تو پانی شہریوں کوفراہم نہ کیا جائے۔ واٹر کمیشن کے سربراہ نے اس موقع پر پانی کی ٹیسٹنگ کے لیے قائم لیبارٹری کا دورہ بھی کیا اور اس کی صورتحال پر بھی ناگواری کا اظہار کیا ۔ انہوں نے پانی اور لیبارٹری کی صورتحال کو ایک ماہ میں بہتر بنانے کی ہدایت کی۔ اس موقع پر روہڑی کے شہریوں نے کمیشن کے سربراہ کوروہڑی کو سپلائی کیے جانے والے پانی اور تالابوں کی صورتحال کی وڈیو بھی دکھائی جس پر انہوں نے سخت ناگواری کا اظہار کیا۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ