کارساز اداروں کی خواہش پر انسانوں پر زہریلے دھوئیں کا تجربہ

170

سائنس ڈیسک
جرمن کار ساز اداروں کی درخواست پر انسانوں کے ایک گروپ کو زہریلے دھویں کے تجربات کا سامنا رہا۔ اس تناظر میں گزشتہ دنوں بندروں پر کیے جانے والے زہریلے دھوئیں کے تجربے کی رپورٹ بھی سامنے آ گئی ہے۔
جرمن کار ساز اداروں کی درخواست پر سائنسدانوں نے ایسے تجربات 2012ء سے 2015ء کے درمیان کیے تھے۔ ان تجربات کی تفصیلات ’اشٹٹ گارٹر سائٹنگ‘ اور ’زُوڈ ڈوئچے سائٹنگ‘ میں شائع ہوئی ہیں۔ اس تناظر میں کار ساز اداروں کا موقف یہ ہے کہ یہ تجربات کار سازی کے فائدے میں تھے اور بنیادی مقصد ڈیزل کاروں کے اخراج کو محدود کرنا تھا۔
یہ تجربات یورپی ریسرچ گروپ انوائرنمنٹ اینڈ ہیلتھ ٹرانسپورٹ سیکٹر یا EUGT نے ماحولیات اور انسانی صحت کے تناظر میں کروائے تھے۔ اس گروپ کو جرمن کار ساز اداروں فوکس ویگن، ڈائملر اور بی ایم ڈبلیو نے مشترکہ طور پر تشکیل دیا تھا جبکہ اسے جرمن حکومت نے خلاف ضابطہ قرار دینے کے بعد تحلیل بھی کر دیا تھا۔
ان تجربات میں انسانوں کے ایک گروپ کو مہلک گیس نائٹروجن ڈائی آکسائیڈ کو اخراج کے وقت سانس کے ذریعے اپنے اندر لے کر جانا تھا۔ اخباری رپورٹوں کے مطابق آخن یونیورسٹی کے اسپتال میں 25 افراد کو نائٹروجن ڈائی آکسائیڈ کی موجودگی میں سانس لینے کی وجہ سے علاج معالجے کی سہولت فراہم کی گئی تھی۔
ان اخباری رپورٹوں پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کارساز ادارے فوکس ویگن نے کہا ہے کہ یہ درست ہے کہ اُس وقت کیے جانے والے تجربات اور سائنسی طریقہ ایک غلط اور نامناسب فیصلہ تھا۔ ڈائملر کمپنی نے بھی ان تجربات کی تفصیلات پر حیرانی کا اظہار کرتے ہوئے افسوس کا اظہار کیا ہے۔ ڈائملر کے مطابق اُسے EUGT کے طریقہٴ کار اور اقدامات کا کوئی علم نہیں تھا۔
اس مناسبت سے گزشتہ دنوں بندروں پر کیے جانے والے تجربات کی تفصیلات بھی سامنے آئی ہیں۔ ڈائملر کی جانب سے یہ بھی کہا گیا ہے کہ اُس نے بندروں اور انسانوں پر کیے جانے والے تجربات کی انکوائری شروع کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ