قطر کا مصر کے ساتھ اختلافات ختم کرنے کا عندیہ

110
دوحہ: قطر کے وزیر خارجہ شیخ محمد بن عبدالرحمن الثانی نجی ٹی وی چینل کو انٹرویو دے رہے ہیں
دوحہ: قطر کے وزیر خارجہ شیخ محمد بن عبدالرحمن الثانی نجی ٹی وی چینل کو انٹرویو دے رہے ہیں
دوحہ (انٹرنیشنل ڈیسک) خلیجی ریاست قطر نے مصر کے ساتھ جاری اختلافات دور کرنے کا عندیہ دیا اور کہا ہے کہ دوحہ قاہرہ کے ساتھ بات چیت کے لیے تیار ہے۔ قطری وزیر خارجہ شیخ محمد بن عبدالرحمن الثانی نے ایک ٹی وی چینل کو دیے گئے انٹرویو میں کہا کہ ان کا ملک مصر کے ساتھ اختلافات ختم کرنے کے لیے بات چیت پر تیار ہے۔انہوں نے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان تنازعات کے حل کے لیے بات چیت تعطل کا شکار رہی ہے۔قطری وزیر خارجہ نے انکشاف کیا کہ سعودی عرب کے موجودہ ولی عہد جب نائب ولی عہد تھے، تو انہوں نے قطر اور مصر کے درمیان اختلافات دور کرنے کی کوشش کی تھی۔ تاہم دونوں ممالک کے درمیان بات چیت کا عمل آگے نہیں بڑھ سکا۔ مصر کے ساتھ تعلقات کے بارے سوال پر قطری وزیر خارجہ نے کہا کہ 25 جنوری 2011ء کے انقلاب کے بعد مصر حساس دور سے گزر رہا ہے۔ ایک مرکزی ملک ہونے کی بدولت ہم مصر کا احترام اور قدر کرتے ہیں۔ مصر کا عرب ممالک میں تنازعات کے حل میں (باقی صفحہ 9 نمبر 12) کلیدی کردار رہا ہے۔ ہم مصری قوم کے فیصلوں کا احترام کرتے ہیں۔ ایک دوسرے سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ قطر مصر کے اندرونی امور میں مداخلت نہیں کرتا۔ایک سوال کے جواب میں قطری وزیرخارجہ نے کہا کہ مصرمیں پہلے منتخب سول صدر محمد مرسی کی برطرفی کے بعد قطر اور مصر کے درمیان اختلافات شدت اختیار کرگئے۔ یہ اختلافات دور کئے جاسکتے ہیں۔ شیخ محمد بن عبدالرحمن الثانی نے بتایا کہ مارچ 2016ء کو سعودی عرب میں ہونے والی شمال کی گرج فوجی مشقوں کے دوران مصری صدر عبدالفتاح سیسی اور امیر قطر تمیم بن حمد الثانی کے درمیان سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کی موجودگی میں ملاقات ہوئی تھی۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ