پاکستان اور بھارت کے درمیان مذاکرات ناگزیر ہیں،امریکا 

48

نیویارک (آن لائن) امریکا اور اقوام متحدہ نے کشمیر کے موجودہ حالات پر تشویش کا اظہار کی کرتے ہوے کہا ہے کہ پائیدار دوستی کے لیے پاکستان اور بھارت کو مذاکرات کی راہ بحا ل کرنا ہو گی جبکہ عالمی ادرہ دونوں ممالک کے درمیان مسئلہ کشمیر کے حل کے لیے کردار ادا کرنے کو تیار ہے۔ بھارتی میڈیا کے مطابق امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان نے ایک بیان میں کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان
مذاکرات کی بحالی وقت کی اہم ترین ضرورت ہے اور امریکا اس سلسلے میں کوششیں جاری رکھے گا کہ دونوں ممالک کے درمیان مذاکرات کا سلسلہ پھر بحال ہو۔کشمیر میں تشدد روکنے کے حوالے سے ترجمان کا کہنا تھا کہ اس مسئلے کی جانب توجہ دینا ہوگی اورجہاں کہیں بھی تشدد آمیز واقعات رونما ہوتے ہوں امریکا کو فکر لاحق رہتی ہے کیونکہ بے گناہ افراد کی ہلاکت سے کچھ بھی حاصل نہیں کیا جا سکتا ہے۔ انہوں نے کہاکہ ٹرمپ انتظامیہ کشمیر سمیت تمام مسائل کو حل کرنے کے لیے باہمی طور پر مسائل کو ایڈریس کرنے کے اپنے موقف پر قائم ہے تاکہ اگر دونوں ممالک یقینی طور پر مسئلہ کشمیر پر امریکا کی براہ راست مدد لینا چاہیں گے توامریکا اس کے لیے بھی تیار ہوگا۔ادھر اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل کے ترجمان نے بھی کشمیر میں تشدد پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ تشدد سے کچھ حاصل نہیں ہوگا۔ لہٰذا دونوں ممالک کو مسئلہ کشمیر سمیت دیگر تمام باہمی مسائل کو حل کرنے کی کوشش کرنا ہوگی۔ انہوں نے واضح کر دیا ہے کہ دونوں ممالک کو آپسی طور پر مسئلہ کشمیر کا حل نکالنا ہوگا۔تاہم ان کا کہنا تھا کہ ہندوپاک کی درخواست پر ہی اقوام متحدہ کوئی ثالثی کرسکتا ہے۔ ترجمان کا کہنا تھا کہ اگر بھارت اور پاکستان اس بات کے لیے تیار ہوجائیں تو اقوام متحدہ کشمیر مسئلے کے حتمی حل کے لیے اپنا کردار ادا کرنے کو تیار ہے ۔انہوں نے مزید کہاکہ ہم چاہتے ہیں کہ صورتحال کو بہتر بنانے کے لیے دونوں ممالک فی الوقت مذاکراتی عمل کو بحال کریں تاکہ ایک مناسب ماحول کی تعمیر ہو سکے جس میں مذاکرات کو نتیجہ خیز بنایا جا سکے۔اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل نے دونوں ممالک پرزور دیا ہے کہ وہ آپسی طورپر مسائل کو حل کرنے کی ہر ممکن کوشش کریں تاکہ خطے میں کسی بھی قسم کا ایٹمی ٹکراؤ روکا جا سکے اور امن کا نیا دور شروع ہو جائے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ