امریکی اقدام سے سخت مایوسی اور صدمہ پہنچا ، نوازشریف

80

لندن/اسلام آباد (خبر ایجنسیاں)سابق وزیراعظم نوازشریف نے کہاہے کہ بیت المقدس اسرائیل کے حوالے کرنا مسلمانوں کے زخموں پر نمک چھڑکنے کے مترادف ہے،امریکی اقدام سے سخت مایوسی اور صدمہ پہنچا ہے۔انہوں ترک صدر کے اعلان کی حمایت کرتے ہوئے منفی اثرات سے بچنیکے لیے سلامتی کونسل کے مستقل ارکان کو فوری مشاورت کرنے پر بھی زور دیا ہے۔نواز شریف کا کہنا تھا کہ امریکی فیصلے کے بعد پاکستان اور امت مسلمہ میں غم و غصے کی لہر دوڑگئی ہے۔انہوں نے کہا کہ امریکی فیصلہ اقوام متحدہ، سابق امریکی صدورکی اعلانیہ پالیسی کی خلاف ورزی ہے۔ اقدام سے قانون کی بالادستی اور عالمی اقدار کوسخت دھچکا لگا ہے۔نواز شریف نے کہا کہ اس وقت مسلم امہ کو بہت سے چیلنجز درپیش ہیں۔ ہمارا ردعمل فلسطینی عوام کے ساتھ اقوام متحدہ کے مسقبل کے لیے بھی اہم ہے ہمیں ایسی دنیا میں رہنے کا فیصلہ کرنا ہے جہاں قانون کی حکمرانی ہو۔دوسری جانب تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے امریکا کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے بیت المقدس کو اسرئیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے کے حوالے سے فیصلے کی شدید مذمت کی ۔صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ امریکی اقدام سے فلسطینی مسلمانوں کی مشکلات میں مزید اضافہ ہو جائے ۔ انہوں نے عالمی برادری سے اپیل کی کہ وہ امریکا کے صدر ٹرمپ کے اس فیصلے کے خلاف متفقہ ردعمل کا اظہار کرے۔ادھرآل پاکستان مسلم لیگ کے چیئرمین پرویز مشرف نے کہا ہے کہ امریکہ بیت المقدس کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے کے فیصلے پر نظرثانی کرے۔ امریکی فیصلہ اسلامی دنیا کے لیے مایوس کن ہے۔امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی پالیسیاں دنیا کو تباہی کی طرف دھکیل رہی ہیں۔اسلامی ممالک حالات کا جائزہ لے کر اس بارے میں متفقہ لائحہ عمل اختیار کریں۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ