مقبوضہ کشمیر میں کیمیائی ہتھیاروں کے استعمال کی تحقیقات ہونی چاہیے‘ پاکستان

263

اسلام آباد (آن لائن ) ترجمان دفتر خارجہ نے کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی جانب سے کیمیائی ہتھیاروں کا ا ستعمال بین الااقوامی قوانین کی خلاف ورزی ہے، اس ہوالے سے عالمی قوانین کے تحت تحقیقات ہونی چاہیے،کلبھوشن یادیو کی اہلیہ سے ملاقات کے حوالے کوئی فیصلہ نہیں کیا ،بھارتی کروز میزائل تجربات اور جنگی تیاریوں میں اضافہ خطے کے امن و سلامتی کے لیے سنگین خطرہ ہے ، افغانستان جنوبی ایشیا کے حوالے سے امریکا اور پاکستان کی سوچ میں فرق ہے، دونوں ملکوں کے درمیان قریبی رابط جاری ہیں۔ دفترخارجہ میں ہفتہ وار بریفنگ کے دوران انہوں نے کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی جانب سے نہتے کشمیریوں پر انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں جاری ہیں، گزشتہ ایک ہفتے کے دوران کئی کشمیری نوجوانوں کو شہید کیا گیا ہے۔ترجمان دفترخارجہ نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں کیمیائی ہتھیاروں کے ا ستعمال کی خبروں پر پاکستان کو گہری تشویش ہے، وادی کشمیر میں بھارتی افواج کی جانب سے کیمیائی ہتھیاروں کے استعمال کی خبریں گردش میں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کشمیریوں پر بھارت کی طرف سے کیمیائی ہتھیاروں کا استعمال بین الااقوامی قوانین کی خلاف ورزی ہے، اس سلسلے میں بین الاقوامی قوانین کے تحت تحقیقات ہونی چاہیے۔ڈاکٹر فیصل کا کہنا تھا کہ مقبوضہ کشمیر میں کیمیائی ہتھیاروں کے استعمال سے متعلق خبروں کی تصدیق لازمی ہے۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ بھارت آزاد انسانی حقوق مشن کو مقبوضہ کشمیر تک رسائی دے۔ترجمان نے ممبئی حملوں کے حوالے سے بتایا کہ سیکرٹری خارجہ تہمینہ جنجوعہ گزشتہ روز ممبئی حملہ کیس میں اے ٹی سی میں پیش ہوئیں اور عدالت کوبتایا کہ بھارتی گواہوں کے بیانات نہ آنے سے تحقیقات آگے نہیں بڑھ رہیں۔پاک امریکا تعلقات کے بارے میں ایک سوال کے جواب میں ترجمان دفتر خارجہ نے کہا کہ نئی امریکی پالیسی کے بعد پاک امریکا تعلقات میں اختلافات موجو دہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان ، امریکی تعلقات مذاکرات کے ذریعے بہتر ہوجائیں گے اس سلسلے میں دونوں ممالک کی اعلیٰ قیادت کے درمیان بات چیت جاری ہے ، امریکی وزیر دفاع بھی جلد پاکستان کا دورہ کریں گے۔انہوں نے مزید کہا کہ جنرل نکلسن کے بیانات نئے نہیں ہیں۔ سعودی عرب میں اسلامی اتحاد کے بارے میں ایک سوال کے جواب میں ترجمان کا کہنا تھا کہ پاکستان نے اسلامی اتحادکوتجربات سے فائدہ پہنچا نے کی پیشکش کی ہے۔ ایک سوال کے جواب میں ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر فیصل نے کہا کہ حافظ سعید کو عدالت نے رہا کیا تھا۔ڈاکٹر فیصل کا کہنا تھا کہ افغانستان میں افیون کی کاشت پر پاکستان کو گہری تشویش ہے، افیون اور پوست دہشت گردوں کے لیے ایک بڑا ذریعہ آمدن ہے، اس سلسلے میں افغان حکومت اور اتحادی افواج کوعالمی معاہدوں کے مطابق اقدامات کرنے چاہئیں۔ترجمان دفترخارجہ نے بتایا کہ وزیراعظم شاہد خاقان عباسی روسی صدر کی دعوت پر شنگھائی تعاون کانفرنس میں شریک ہیں ۔اس کے علاوہ وزیر خارجہ خواجہ آصف آزبائیجان میں ساتویں سہ فریقی ہارٹ آف ایشیا کانفرنس کے لیے وفد کی قیادت کررہے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ