غیرذمے دارانہ رپورٹنگ سے سی پیک متاثرہو گا145دوستان جمال

23

کوئٹہ (آن لائن) گوادر پورٹ اتھارٹی (جی پی اے) کے چیئرمین دوستان خان جمال دینی نے کہا ہے کہ غیرذمے دارانہ رپورٹنگ سے سی پیک متاثر ہوگا145 رعایتی معاہدے پر ذرائع ابلاغ میں پیش کیے گئے مفروضات کومسترد کرتے ہیں۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق گوادر پورٹ کے حوالے سے10برس قبل2007ء میں بندرگاہ چلانے والی سابق کمپنی پورٹ آف سنگاپور اتھارٹی انٹرنیشنل (پی ایس اے آئی) سے معاہدے پر دستخط ہوئے تھے۔ انہوں نے واضح کیا کہ تعمیر کے کام کی منتقلی (بی او
ٹی) کی بنیاد پر2013ء تک پی ایس اے آئی کی جانب سے بندرگاہ اور اس کا فری زون تعمیر نہیں کیا گیا تھا145 بندرگاہ چلانے والی موجودہ کمپنی سی او پی ایچ سی کی جانب سے2013ء میں معاہدے میں کسی ترمیم کے بغیر متعلقہ حکام سے تجارتی مذاکرات کے بعد بندرگاہ کا قبضہ سنبھال لیا تھا لہٰذا شرائط و ضوابط سی پیک کے وجود سے قبل طے کرلیے گئے تھے۔ انہوں نے بتایا کہ کمپنی 2300 ایکڑ کے قریب حصے پر گوادر فری زون تعمیر کر رہی ہے اور یہ ابتدائی منصوبہ بی او ٹی کی بنیاد پر کمپنی کی فنڈنگ سے مکمل ہوگا جبکہ کمپنی 2048ء تک اس پر تقریباً 5 ارب ڈالر خرچ کرے گی۔ دوستان خان جمال دینی نے کہا کہ رعایتی مدت کے مکمل ہونے کے بعد تعمیر اور تیار کیے گئے مکمل اثاثے گوادر پورٹ اور گوادر زون میں اربوں ڈالر کے بزنس کے ساتھ جی پی اے کو منتقل کردیے جائیں گے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ