دینی و سیاسی جماعتوں کا زاہد حامد کو برطرف کرنے کا مطالبہ‘ اسلام آباد دھرنے کی حمایت

150
اسلام آباد: وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال علماء و مشائخ کے ساتھ پریس کانفرنس کررہے ہیں
اسلام آباد: وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال علماء و مشائخ کے ساتھ پریس کانفرنس کررہے ہیں

کراچی (اسٹاف رپورٹر) ملک کی مختلف مذہبی اور سیاسی جماعتوں کے رہنماؤں نے اسلام آباد دھرنے کے مطالبات کی تائید کرتے ہوئے کہا ہے کہ وفاقی وزیر قانون زاہد حامد کو فوری برطرف کرکے ان کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کی جائے، پنجاب کے وزیر قانون رانا ثنا اللہ کے بیانات کا نوٹس لے کر ان کے خلاف بھی کارروائی کی جائے،ناموس رسالت کے قانون میں کسی بھی طرح کی تبدیلی، ترمیم یا منسوخی امت مسلمہ پر حملہ ہے اس کو کسی صورت برداشت نہیں کیا جائے گا،اس سازش میں ملوث عناصر کو بے نقاب کیا جائے اور آئندہ کے لیے اس پر گہری نظر رکھی جائے، راجا ظفر الحق کی سربراہی میں قائم کمیٹی کی رپورٹ جلد از جلد منظر عام پر لائی جائے۔شرکا نے انتخابی اصلاحات کے بل میں ختم نبوت کے حلف و دیگر شقوں میں تبدیلی کے عمل کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ دھرنے کو طاقت کے ذریعے ختم کرنے کی کوشش کسی صورت برداشت نہیں کی جائے گی، باہمی بات چیت سے مسئلے کا حل نکالا جائے ،حلف نامہ اور دیگرشقوں کی بحالی پر پارلیمنٹ کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں۔ ان خیالات کا اظہار عالمی مجلس تحفظ ختم نبوت کے زیر اہتمام مجلس کے مرکز جامع مسجد باب الرحمت نورانی (نمائش) چورنگی میں منعقدہ آل پارٹیز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے عالمی مجلس تحفظ ختم نبوت کے پاکستان کے امیر مولانا ڈاکٹر عبدالرزاق اسکندر،نائب امیر جماعت اسلامی پاکستان اسد اللہ بھٹو،نائب امیر جماعت اسلامی سندھ محمد حسین محنتی، جمعیت علما اسلام کے قاری محمد عثمان، ، جمعیت علما پاکستان کے قاضی احمد نورانی، جامعہ دارالعلوم کراچی کے مولانا راحت علی ہاشمی، غربا اہل حدیث کے حافظ محمد سلفی، پیپلز پارٹی کے حاجی مظفرعلی شجرہ، حبیب الدین جنیدی، سربراہ پی ڈی پی بشارت مرزا، متحدہ علما محاذ کے علامہ مرزا یوسف حسینی، صحافی عبدالجبار ناصر و دیگر نے خطاب کرتے ہوئے اور منظور کی گئی مشترکہ قراردادوں کے ذریعے کیا۔ اے پی سی میں مختلف قراردادیں منظور کی گئیں۔ ایک قرارداد میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ حکمران اور دیگر عناصر ختم نبوت اور دیگر اسلامی شقوں میں کسی بھی طرح کی تبدیلی، تنسیخ سے آئندہ گریز کرے کہ یہ امت مسلمہ کے ایمان کا مسئلہ ہے جو عناصر اس طرح کے اقدام میں ملوث ہیں وہ دراصل ملک میں انتشار پیدا کرنا چاہتے ہیں حکومت ان کے خلاف کارروائی کرے۔ انتخابی اصلاحات ایکٹ میں حلف نامے اور مختلف شقوں کی ترمیم میں ملوث وفاقی وزیر قانون زاہد حامد کو فوری طور پر برطرف کیا جائے ۔ قرارداد میں پنجاب کے وزیر قانون رانا ثنا اللہ کے بعض بیانات کا بھی سختی سے نوٹس لیا گیا اور پنجاب کے وزیر اعلیٰ شہباز شریف سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ انہیں فوری طور پر وزارت سے برطرف کیا جائے۔ آل پارٹیز کانفرنس میں مقررین نے کہا کہ فوری طور پر راجا ظفرالحق تحقیقاتی کمیٹی کی رپورٹ عام کی جائے، ذمے داران کا تعین کرکے انہیں عہدوں سے ہٹایا جائے اور مجرموں کے خلاف تادیبی کارروائی کی جائے۔ آئندہ کے لئے یقین دہانی کرائی جائے کہ اس قسم کی سازشوں کا اعادہ نہیں کیا جائے گا، ان رہنماؤں نے مزید مطالبہ کیا کہ تمام محکموں میں کلیدی عہدوں پر فائز قادیانیوں کا علیحدہ ڈیٹا بیس مرتب کیا جائے۔ کانفرنس نے ختم نبوت کے حلف نامے اور دیگر شقوں میں تبدیلی کے خلاف متفقہ طور پر قرارداد منظور کی ۔ قرار داد میں کہا گیا ہے کہ یہ اجتماع الیکشن ایکٹ 2017ء میں کی گئی ان تمام ترامیم کو رد کرتا ہے جس کے ذریعے عقید ختم نبوت پر کامل یقین کے اظہار سے متعلق حلف ناموں میں ردو بدل کرکے انہیں غیر مؤثر بنانے کی کوشش کی گئی اور اللہ رب العزت کا شکر ادا کرتا ہے کہ عقیدہ ختم نبوت پر کامل یقین کے اظہار سے متعلق حلف ناموں کو ان کی اصل شکل میں بحال کیا گیا۔
***
لاہور (صباح نیوز)عالمی مجلس تحفظ ختم نبوت کے زیراہتمام آل پارٹیزتحفظ ختم نبوت کانفرنس جامع مسجد خضرا لاہورمیں مجلس تحفظ ختم نبوت لاہورکے امیر شیخ الحدیث مولانا مفتی محمدحسن کی صدارت میں منعقد ہوئی ۔ کانفرنس میں مجلس تحفظ ختم نبوت کے مرکزی رہنما مولانا اللہ وسایا ،سیکرٹری جنرل جماعت اسلامی پاکستان لیاقت بلوچ،جمعیت علما اسلام( ف) کے مرکزی رہنما مولانا محمدامجد خان،پاکستان شریعت کونسل کے مولانا زاہدالراشدی،جمعیت علما اسلام( س) کے مرکزی رہنما مولانا عبدالرؤف فاروقی،مولانا احمدعلی ثانی،مولانا جمیل الرحمن اختر سمیت کثیرتعداد میں علما اور اہل علاقہ نے شرکت کی۔کانفرنس سے خطاب کرتے مقررین نے کہا کہ قادیانی لابی حکومتی صفوں میں گھس چکی ہے۔ حکمران غیر ملکی آقاؤں کو خوش کرنے کے لیے قادیانیت نوازی کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔ اہل حق ختم نبوت حلف نامہ تبدیل کرنے والوں کو سزا دلا کر دم لیں گے۔ قادیانی اسلام اور پاکستان کے کھلے دشمن ہیں۔ قادیانی قرآن و سنت، اجماع امت اور 73 ء کے آئین کی رو سے دائرہ اسلام سے خارج ہیں۔ اس لیے قادیانیوں کو مسلمان سمجھنے والا اسلام اور آئین کا غدار ہے۔امریکا نے ناموس رسالت قانون تبدیلی کا مطالبہ کر کے پاکستان کے اندرونی معاملات میں مداخلت کی ہے۔

حصہ