متحدہ نظام مصطفی محاذ نے بھی اسلام آ باد دھرنے کی حمایت کردی

119
راولپنڈی: متحدہ نظام مصطفی محاذ کے کنوینر حامد سعید کاظمی رہنماؤں کے ساتھ پریس کانفرنس کررہے ہیں
راولپنڈی: متحدہ نظام مصطفی محاذ کے کنوینر حامد سعید کاظمی رہنماؤں کے ساتھ پریس کانفرنس کررہے ہیں

اسلام آباد( نمائندہ جسارت)13 دینی جماعتوں اور دینی شخصیات پر مشتمل گرینڈ الائنس ”متحدہ نظام مصطفی محاذ ”نے تحریک پاکستان یا رسول اللہ کے دھرنے اور ان کے تمام مطالبات کی مکمل حمایت کا اعلان کر دیا ہے اورمطالبہ کیا ہے کہ وفاقی وزیر قانون زاہد حامد اور وزیر قانون پنجاب رانا ثنا اللہ کو برطرف کیا جائے۔متحدہ نظام مصطفی محاذ نے فیصلہ کیا ہے کہ ملک گیر علما و مشائخ کنونشن منعقد کر کے رابطہ عوام مہم شروع کی جائے گی اور ربیع الاول کے بعد چاروں صوبوں میں بڑے سیاسی جلسے منعقد کیے جائیں گے اور کراچی سے راولپنڈی تک کارواں چلایا جائے گا۔ اس بات کا فیصلہ ادارہ تعلیمات اسلامیہ راولپنڈی میں علامہ پیر سید ریاض حسین شاہ کی میزبانی میں منعقد ہونے والے متحدہ نظام مصطفی محاذ کے سربراہی اجلاس میں کیا گیا۔اجلاس میں متحدہ نظام مصطفی محاذ کے کنوینر صاحبزادہ سید حامد سعید کاظمی، جماعت اہل سنت کے ناظم اعلیٰ علامہ پیر سید ریاض حسین شاہ، سنی اتحاد کونسل کے چیئرمین صاحبزادہ حامد رضا، جے یو پی کے سیکرٹری جنرل صاحبزادہ شاہ اویس نورانی، نظام مصطفی پارٹی کے سربراہ الحاج حنیف طیب، جمعیت علمائے پاکستان کے صدر صاحبزادہ ڈاکٹر ابو الخیر محمد زبیر، پاکستان سنی تحریک کے مرکزی نائب صدر شاہد غوری، جے یوپی نیازی کے مرکزی نائب امیر مولانا محمد عباس ہاشمی، فلاح پارٹی کے صدر قاضی عتیق الرحمن، قومی اسمبلی کے سابق رکن صاحبزادہ میاں جلیل احمد شرقپوری، سابق ایم این اے محمد عثمان خان نوری، میاں خالد حبیب الٰہی ایڈووکیٹ،پنجاب اسمبلی کے رکن پیر سید محمد محفوظ مشہدی ،عبدالرزاق ساجد، صاحبزادہ سید صفدر شاہ گیلانی، امانت علی زیب، سید جواد الحسن کاظمی، ڈکٹر ظفر اقبال جلالی اور دیگر نے شرکت کی۔ اجلاس کے اختتام پر نظام مصطفی محاذ کے کنوینر صاحبزادہ سید حامد سعید کاظمی نے دیگر رہنماؤں کے ساتھ مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ ختم نبوت حلف نامے میں تبدیلی کرنے والوں کی برطرفی تک عوامی بے چینی ختم نہیں ہو گی،ختم نبوت کے معاملے میں کوئی سمجھوتا نہیں ہو سکتا ،پرویز رشید اور مشاہد اللہ کو کسی اور مسئلے پر برطرف کیا جا سکتا ہے تو زاہد حامد کو ختم نبوت کے مسئلے پر بر طرف کیوں نہیں کیا جا سکتا۔ ان رہنماؤں نے بتایا کہ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ جمعہ 24 نومبر کو ملک بھر میں ” یوم ختم نبوت ” منایا جائے گا ،متحدہ محاذ کے آئندہ اجلاس میں منشور و دستور منظور کیا جائے گا، اسلام آباد دھرنے کے مطالبات کی تائید و حمایت کرتے ہیں،دھرنے کے خلاف ریاستی طاقت کا استعمال برداشت نہیں کریں گے،حکومت طاقت کے بجائے مذاکرات سے دھرنے کا مسئلہ حل کرے ،میلادالنبی کے تمام پروگراموں کو ختم نبوت سے منسوب کیا جائے گا ۔ اجلاس میں ملکی و سیاسی صورت حال کا جائزہ لے کر آئندہ کا مشترکہ انتخابی لائحہ عمل تیار کیا گیا۔