دھرنا ختم کرانے کیلیے مذہبی جماعتوں سے مدد طلب‘ آپریشن آخری حل ہوگا‘ احسن اقبال

106

اسلام آباد ( نمائندہ جسارت) حکومت نے اسلام آباد میں دھرنا ختم کرانے کے لیے مذہبی جماعتوں سے مددطلب کرلی ہے ۔ وفاقی وزیرداخلہ احسن اقبال نے آج تمام مکاتب فکر کے علماء کااجلاس بلا لیا ہے ۔ اسلام آباد میں پیر امین الحسنات کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے انہوں نے ایک بار پھر اپیل کی کہ ملک اور قوم کے مفاد میں دھرنا ختم کردیا جائے۔ وزیرداخلہ نے کہا کہ دھرنا مظاہرین شوشل میڈیا کے ذریعے عوام کے جذبات کو بھڑکارہے ہیں‘ ہمارے صبر کا پیمانہ لبریز ہوگیا‘سیکورٹی ادارے کسی بھی حالت سے نمٹنے کے لیے تیار ہیں‘ دھرنا ختم کرانے کے لیے آپریشن آخری حل ہوگا۔ان کے بقول پوری کوشش ہے کہ پر امن طریقے سے اس مسئلے کا حل ہو جائے اور اگر انتظامی ایکشن بھی لینا پڑے تو کسی قسم کا جانی نقصان نہ ہو،البتہ ہمیں معلوم ہے کہ ان کی صفوں میں شر پسند لوگ موجود ہیں جن کے پاس اسلحہ ہے اور وہ چاہتے ہیں کہ اس تنازعے کو کسی طرح ماڈل ٹاؤن والا حادثہ بنائیں۔احسن اقبال نے کہا کہ ختم نبوت کے معاملے پر مظاہرین کی آواز بھرپور طریقے سے سنی جا چکی ہے اور پارلیمان نے اس معاملے پر موثر اور سخت قانون سازی کر دی ہے۔ دوسری جانب دھرنا رہنماؤں نے وفاقی وزیر قانون زاہد حامد کی برطرفی تک احتجاج ختم سے پھر انکار کردیا ہے ۔حکومت کی جانب سے دوسری ڈیڈ لائن بھی ختم ہوگئی ہے۔ رینجرز، ایف سی اور پولیس کی بھاری نفری تعینات کرکے آنسوگیس کے شیل فراہم کردیے گئے ہیں۔ادھر جڑواں شہروں کے سنگم پر دھرنے کے باعث مہنگائی کا طوفان امڈ آیا ہے۔ روزمرہ کی استعمال میں آنے والی اشیاء کی قیمتیں 100فیصد بڑھ چکی ہیں، میڈیکل اسٹوروں پر دوائیوں کی قلت ہوگئی ہے، نجی اسپتالوں میں ڈرائیوں کی قلت نے سر اٹھا لیا جس کے باعث مریضوں کی جانوں کو خطرات لاحق ہو گئے ہیں ۔عدالتوں مین کام ٹھپ ہوجانے سے گزشتہ دس روز میں ہزاروں مقدمات کی سماعت نہ ہو سکی ہے اور سائلین دور دراز علاقوں سے آنے کے باوجود عدالتوں تک نہ پہنچ سکے ۔