کمال اتاترک کو دشمن ظاہر کرنے پر ترکی نیٹو مشقوں سے علیحدہ ہوگیا

160

ترکی نے ترک سیاسی رہنمائوں کی ناروے میں فوجی مشقوں کے دوران بانی قائد مصطفی کمال اتاترک کی دشمن کے طور پر تصویر لگا کر بے عزتی پر غم وغصے کااظہار کردیا اوراحتجاج کرتے ہوئے نیٹو کی فوجی مشقوں سے علیحدہ ہو گیا ۔

ہفتہ کو غیر ملکی خبررساںا دارے کے مطابق ایک فوجی مشق میں دشمن کی تصویر اصل میں ترکی کے بانی قائد مصطفی کمال اتاترک کی تھی۔ترک میڈیا کا کہنا ہے کہ  سوشل میڈیا پر ترک صدر طیب رجب اردوگان کے نام سے ایک جعلی اکائونٹ سے نیٹو مخالف پیغامات بھی بھیجے گئے ہیں۔ان واقعات کے ردِعمل میں ترکی نے مشقوں میں شریک اپنے 40 فوجیوں کو واپس بلا لیا ہے۔

نیٹو میں ترکی کی دوسری بڑی فوج ہے اور ترکی دولتِ اسلامیہ کے خلاف اتحاد اور افغانستان میں نیٹو مشن دونوں کا حصہ ہے۔ناروے کے وزیرِ دفاع نے اس واقعے کے بعد معافی مانگی ہے اور انھوں نے اس واقعے کی ذمہ داری ایک انفرادی شخص پر ڈالی۔

ترک براڈ کاسٹر این ٹی وی کا کہنا ہے کہ اس واقعے میں ملوث وہ ایک شخص ترک نژاد ناورے کا فوجی ہے۔ناروے کے وزیرِ دفاع کا کہنا ہے کہ اس واقعے میں ملوث ناورے کا فوجی ایک ٹھیکیدار تھا جسے ان مشقوں کے لیے رکھا گیا تھا۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ اس حوالے سے تحقیقات کی جا رہی ہیں۔ادھر نیٹو کے سیکرٹری جنرل جنز سٹولٹنبرگ نے بھی اس حوالے سے معافی مانگی ہے اور ترکی کو نیٹو کے فوجی اتحاد کا اہم حصہ قرار دیا۔

ترکی کی عسکری اور سٹراٹیجک اہمیت کے باوجود شام، ایران اور عراق کے ساتھ متصل سرحدوں کی وجہ سے ترکی کے مغربی ممالک کے ساتھ گذشتہ چند سالوں سے تعلقات میں تنا رہا ہے۔صدر اردوگان نے سرِعام آسٹریا، جرمنی، اور ہالینڈ کے ساتھ سفارتی لڑائی لڑی ہے جب انھوں نے ترکی کے شہریوں کی سیاسی ریلیوں کے خلاف کارروائیاں کی ہیں۔

ادھر ترکی نے روس کے ساتھ بہتر تعلقات کی کوششیں کی ہیں اور شام میں فضائی کارروائیاں میں دونوں ممالک نے تعاون بھی کیا ہے۔ترکی کی یورپی یونین میں رکنیت بھی تاخیر اور دیگر مشکلات کا شکار ہے۔