پیسکومیں 7 ارب روپے کے کرپشن ا سکینڈل کا انکشاف 

43

اسلام آباد (آن لائن) وزارت توانائی کے زیر انتظام پشاور الیکٹرک سٹی سپلائی کارپوریشن ( پیسکو ) میں 7 ارب روپے کی کرپشن ‘ مالی بدعنوانی اور مالی بے قاعدگیوں کا انکشاف ہوا ہے۔ وزارت توانائی کے سیکرٹری نے کمپنی میں مبینہ 7 ارب روپے کی مالی بدعنوانی کے بارے میں مفصل رپورٹ پارلیمانی کمیٹی کو ارسال کر دی ، جس کے نتیجے میں اگلے ہفتے بڑے پیمانے پر تحقیقات کا آغاز ہو گا ۔
دستاویزات کے مطابق پیسکو کمپنی کے اعلیٰ افسران نے قواعد و ضوابط کی خلاف ورزی کرتے ہوئے 2 ارب 43 کروڑ روپے کا الیکٹرک میٹریل خریداتھا ۔ اسکینڈل منظر عام پر آنے کے بعد 2015ء میں انکوائری کا حکم ہوا تھا، کمیٹی کی رپورٹ آنے کے بعد بھی ذمے دار افسران کے خلاف کوئی کارروائی نہیں کی گئی۔ امریکی امداد سے ملنے والے ایک ارب روپے کے الیکٹرک سامان کو پیسکو حکام نے استعمال ہی نہیں کیا۔ اعلیٰ افسران نے مراعاتی پیکج میں 72 کروڑ روپے کی مالی بدعنوانی کی ۔ منقطع کنکشن صارفین کے نام 70 کروڑ روپے کے اضافی بل بجھوا رکھے ہیں ۔ ایک گاؤں سے بجلی کی ترسیل کے نام پر 20 کروڑ روپے وصول کر رکھے ہیں ۔ ٹرانسفارمر کی تنصیب سے 13 کروڑ روپے کے کنٹریکٹ بھاری ریٹس پر الاٹ کیے ۔

حصہ