حدیبیہ ریفرنس سماعت کیلیے منظور‘ بینچ تشکیل

153

نیب نے درخواست کی تھی ‘ شریف برادران اوراسحاق ڈارملزم نامز دہیں‘ چیف جسٹس نے پاناما فیصلہ دینے والے جسٹس آصف کھوسہ کو 3رکنی بینچ کا سربراہ مقرر کردیا‘ پہلی سماعت 13نومبرکو ہوگی

قومی احتساب بیورو کے پراسیکیوٹرجنرل کو نوٹس جاری۔نیب کے تینوں ریفرنسز میں عاید کیے گئے الزامات مختلف ہیں ‘مشترکہ ٹرائل سے کنفیوژن پیدا ہوگی‘ احتساب عدالت کاتفصیلی فیصلہ

اسلام آباد( خبرایجنسیاں +مانیٹرنگ ڈیسک ) چیف جسٹس آف پاکستان میاں ثاقب نثار نے قومی احتساب بیورو(نیب )کی درخواست پر حدیبیہ پیپر ملز ریفرنس کی سماعت کے لیے 3 رکنی بینچ تشکیل دے دیا۔اس مقدمے میں سابق وزیراعظم نواز شریف کے علاوہ ان کے بھائی اور وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف، ان کے صاحبزادے حمزہ شہباز اور وزیر خزانہ اسحاق ڈار نامزد ہیں۔بینچ کی سربراہی جسٹس آصف سعید کھوسہ کریں گے، دیگر ارکان میں جسٹس دوست محمد اور جسٹس مظہر خیل عالم میاں خیل شامل ہیں۔عدالت عظمیٰ کا 3رکنی بینچ 13 نومبر کو پہلی سماعت کرے گا۔درخواست کی سماعت کے بعدحدیبیہ پیپرز ملز کے ریفرنس کو دوبارہ کھولنے یا نہ کھولنے کے بارے میں احکامات جاری کیے جائیں گے۔ اس حوالے سے رجسٹرار آفس نے نیب پراسکیوٹر جنرل کو نوٹس جاری کردیا۔یاد رہے کہ جسٹس آصف سعید کھوسہ نے عدالت عظمیٰ کے اس 5رکنی بینچ کی سربراہی بھی کی تھی جس نے پاناما لیکس کی درخواستوں پر فیصلہ سناتے ہوئے اس وقت کے وزیر اعظم میاں نواز شریف کو نااہل قرار دیا تھا۔دوسری جانب اسلام آباد کی احتساب عدالت نے نوازشریف کی 3نیب ریفرنسز کو یکجا کرنے کی درخواست مسترد کرنے کا تفصیلی فیصلہ جاری کر دیا ہے ۔ تفصیلی فیصلے میں کہا گیا ہے کہتینوں ریفرنسز میں عاید کیے گئے الزامات مختلف ہیں جب کہ صرف 2گواہان مشترک ہیں۔فیصلے میں کہا گیا ہے کہ بہت سے ایسے عوامل ہیں جو جوائنٹ ٹرائل کی صورت میں کنفیوژن اور پیچیدگی پیدا کر سکتے ہیں۔

حصہ