اعلیٰ افغان وفد کی پاکستان آمد خیبر ایجنسی کے مشران سے مذاکرات

36

خیبر ایجنسی (صباح نیوز) افغانستان کے اعلیٰ سطحی وفد کا دورہ پاکستان، خیبر ایجنسی کے مشران کے ساتھ کئی گھنٹے تک مذاکرات، اعتماد کی بحالی اور ایک دوسرے پر الزامات کے خاتمے تک تعلقات میں بہتری لانا مشکل ہے، تجارت، امن اور اچھی ہمسائیگی کے لیے مزید جرگوں کے انعقاد پر اتفاق۔ سرکاری ذرائع کے مطابق افغانستان سے ایک 13 رکنی اعلیٰ سرکاری وفد نے بدھ کے روز لنڈی کوتل کا دورہ کیا۔ لنڈی کوتل کے سرکردہ مشران نے افغان وفد کا طور خم بارڈر پر پرتباک استقبال کیا جس کے بعد لنڈی کوتل تحصیل میں مشران ملک دریا خان، ملک صالح شاہ، ملک حسن خان و دیگر نے پاکستان کی جبکہ مولوی سید محمد، مولوی عنایت الرحمان و دیگر نے افغانستان کی نمائندگی کی۔ ذرائع کے مطابق وفود نے دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کی بہتری اور تجارت و آمد و رفت میں آسانی پیدا کرنے کے لیے تجاویز پیش کیں۔



پاکستانی وفد نے واضح کیا کہ جب تک ایک دوسرے پر الزامات کا سلسلہ بند نہیں ہوتا اور بااہمی اعتماد بحال نہیں ہوتا دونوں ممالک میں امن کا قیام مشکل ہے۔ دونوں ممالک کے وفود نے اس بات پر اتفاق کیا کہ دہشت گرد دونوں ممالک کے مشترکہ دشمن ہیں اس لیے مل کر دہشت گردی کے خلاف جدوجہد کرنی چاہیے۔ آخر میں دونوں ممالک کے وفود نے اس بات پر اتفاق کیا کہ اس طرح کی ملاقاتیں وقتاً فوقتاً ہونی چاہییں جس سے اعتماد کی بحالی میں مدد ملے گی۔

Print Friendly
حصہ