قرآن کے نظام تک کسی کو انصاف نہیں مل سکتا،سینیٹرسراج الحق

131

 امیرجماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ پلی بارگیننگ کے حوالے سے جو کام نیب کےلئے حرام قرار دیا گیا وہ عدالت کی اجازت سے کس طرح جائز ہو سکتا ہے۔ایک طرف سینٹ کا اجلاس طلب کیا گیا ہے جبکہ دوسری طرف حکومت نے پلی بار گیننگ کے حوالے سے رات کے اندھیر ے میں آرڈنےنس جاری کرکے بد دیانتی کی نئی مثال قائم کی ۔ افغانستان میں پسند اور ناپسند کی بجائے ہمیں پر امن افغانستان کی ضرورت ہے ۔ وزیر اعلی پرویز خٹک دورہ چین اور سی پیک کے حوالے سے جلد از جلد صوبائی کابینہ اور اسمبلی کو اعتماد میں لےکر شکوک و شبہات ختم کریں۔

وہ مرکز اسلامی چارسدہ میں تربیتی اجتماع اور بعد ازاں میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کر رہے تھے ۔ تربیتی اجتماع سے صوبائی امیر مشتاق احمد خان ، ضلعی امیر محمد ریاض خان ، جنرل سیکرٹری سیف اللہ درانی اور دیگر نے بھی خطاب کیا جبکہ اس موقع پر مولانا خافظ محمد حسین ، مولانا حضرت عمر اور مفتی شبیر احمد نے جے یو آئی سے مستعفی ہو کر جماعت اسلامی میں باقاعدہ شمولیت کا اعلان کیا ۔

سینیٹر سراج الحق کہاکہ جماعت اسلامی وطن عزیز میں نظام مصطفی کےلئے عملی جدو جہد کررہی ہے ۔ قائد اعظم اور علامہ اقبال کے پاکستان کو سےکولر سٹیٹ بنا نے کی کوشش کی جارہی ہے جہاں عد ل انصاف کا فقدان ہے ۔ وطن عزیز کو یورپ اور مغرب کی غلامی میں دیا جارہاہے اور عوام کے اوپرقرضوں کا بوجھ لاد دیا گیا ہے ۔ آج پاکستان کے پاسپورٹ اور قومی لباس کو دنیا بھر میں نفرت کی نگاہ سے دیکھا جا رہا ہے ۔

انہوں نے کہاکہ جماعت اسلامی پاکستان کو فلاحی اسلامی ریاست بنانا چاہتی ہے جس میں قانون کی حکمرانی ،عدل و انصاف اور غریبوں کےلئے تعلےم ، صحت اور گھر کے ساتھ ساتھ عزت اور وقار موجود ہو۔جماعت اسلامی عدالتوں میں قرآن کی حکمرانی دیکھنا چاہتی ہے کیونکہ جب تک عدالتوں میں قرآن اور شریعت کانظام لاگو نہیں ہوگا، انصاف کا تصور ممکن نہیں ۔

انہوں نے کہاکہ جماعت اسلامی کی کوششوں سے خیبر پختونخوا مےں سود کے خلاف بل منظور ہو چکا ہے اور سود خوروں کے خلاف باقاعدہ مقدمات درج ہو رہے ہیں۔پی ٹی سی ایل ، واپڈ ، سٹیل ملز اور پی آئی اے خسارے میں چل رہی ہیں ۔ ائر پورٹ اور موٹر وے کو ایک ارب ڈالر کے عوض جبکہ پی ٹی وی اور ریڈیو پاکستان کو 72کروڑ ڈالر میں گروی رکھا جا رہاہے ۔ نیب پر چیف جسٹس انگلیاں اٹھا رہے ہیں مگر جماعت اسلامی چیف جسٹس کو بتا نا چاہتی ہے کہ صرف اداروں پر تنقید سے کام نہیں چلے گا ۔ چیف جسٹس چوروں اور ڈاکوﺅں کے خلاف قانون کے مطابق فیصلے کریں ۔ ظلم ، جبر اور استحصال کا یہ نظام انسان کا بنایا ہوا ہے ۔ اس ملک میں سرمایہ داروں کے کتے مزے کرتے ہیں جبکہ غریب کے بچوں کو دو وقت کی روٹی نہیں مل رہی ہے ۔ جماعت اسلامی ایک ترقی پسند جمہوری جماعت ہے جس میں موروثیت کا کوئی تصور نہیں ۔ جماعت اسلامی نےب کے سربراہ کی تقرری کا اختیار چیف جسٹس آف پاکستان اور چاروں ہائی کورٹس کے چیف جسٹس کو دینے کے حق میں ہے ۔

انہوں نے کہا کہ عدالتوں نے چوروں کا احتساب نہ کیاتو جماعت اسلامی عوام کی عدالت میں جائے گی۔پلی بارگیننگ لوٹ مار کا ایک راستہ ہے اور جماعت اسلامی نے ہمیشہ اس کی مخالفت کی ہے ۔ حکومت نے پلی بار گیننگ کے حوالے سے رات کے اندھیرے میں آرڈنینس جاری کرکے بدیانتی کی ہے ۔ ایک طرف سینٹ کا اجلاس طلب کیا گیا ہے اور جب ایوان کا اجلاس بلایا گیا ہوتو اس دوران آرڈنینس جاری کرنا سمجھ سے بالا تر ہے ۔حکومت عدلیہ کو نیب کے معاملات میں الجھا کر بد نام کرنا چاہتی ہے۔

 امیر جماعت خیبر پختونخوا مشتاق احمد خان نے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ سی پیک کے حوالے سے ہمیں کاغذی کاروائی پر یقین نہیں بلکہ مغربی روٹ کو تمام لوازما ت کے ساتھ پہلے بنانا ہو گا۔ وزیر اعلی پرویز خٹک دورہ چین اور سی پیک کے حوالے سے جلد از جلد صوبائی کابینہ اور اسمبلی کو اعتماد میں لےکر شکوک و شبہات ختم کریں۔ تمام سیاسی جماعتیں اور فاٹا کے عوام ایف سی آر کا خاتمہ چاہتے ہیں اور فاٹا کے مستقبل کے حوالے سے اس مہینے وفاقی حکومت نے کوئی فیصلہ نہ کیا تو جماعت اسلامی قبائلیوں کو ساتھ لے کر اسلام آباد تک لانگ مارچ کرےگی ۔انہوں نے کہاکہ روس، چین اور پاکستان افغانستان کے حوالے سے مذاکراتی عمل میں افغان حکومت اور افغان عوام کو شامل کریں ورنہ کوئی بھی فیصلہ نتیجہ خیز نہیں ہو گا۔ پسند نا پسند کی بجائے ہمیں پر امن افغانستان کی ضرورت ہے ۔ پاکستان میں امن افعانستان کے امن سے وابستہ ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ