نیب کی پلی بارگین ایک فراڈ ہے جس کا خاتمہ ضروری ہے،شہبازشریف

90

وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف نے کہا ہے کہ نیب کی پلی بارگین ایک فراڈ ، یہ نظام آمر مشرف کا دیا ہوا ہے ،اس کا خاتمہ وقت کی ضرورت ہے ،اربوں کھربوں کی کرپشن کرنے والوں سے چند کوڑیاں وصول کی جاتی ہیں ، ہے ، مہذب معاشروں میں کرپشن کرنے والوں کو سزا ملتی ہے اور جیلو ں میں جانا پڑتا ہے ،بلوچستان کی مثال سب کے سامنے ہے،کرپشن کے خلاف بند باندھنا قوم کی بڑی خدمت ہے اور ہمیں ملکر ایسے اقدامات کرنا ہیں جس سے ملک سے کرپشن کا مکمل خاتمہ ہو ،پنجاب حکومت ای گورننس کی جانب تیزی سے آگے بڑھ رہی ہے اور لینڈ ریکارڈ مینجمنٹ انفارمیشن سسٹم کے بعد صوبے کی 144 تحصیلوں میں ای۔

وہ پیر کو یہاں ارفع کریم سافٹ ویئرٹیکنالوجی پارک میں ای اسٹامپ پیپر کے اجراء کے موقع پر منعقدہ تقریب سے خطاب کر رہے تھے ۔ وزیر اعلیٰ پنجاب نے کہا کہ آج پنجاب کی تاریخ کا ایک اور اہم دن ہے جب صوبے کے تمام اضلاع میں ای۔ اسٹامپ پیپر کے اجراء کا نظام لاگو کر دیا گیا ہے ۔ اس نئے نظام کے تحت عوام کو تین دن کی بجائے صرف پندرہ منٹ میں اسٹامپ پیپر کا حصول ممکن بنا دیا گیا ہے اور عوام کو اب مختلف دفاتر اور بنکوں کے چکر نہیں کاٹنے پڑیں گے ۔

وزیراعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف کا کہنا تھا کہ تعلیم ، صحت اور پولیس کے نظام اور دیگر شعبوں میں بھی جدید ٹیکنالوجی کو فروغ دیا جا رہاہے ۔ ہسپتالوں میں جدید انفارمیشن سسٹم لا رہے ہیں جس سے ہسپتالوں میں ڈاکٹروں ، پیرا میڈیکل سٹاف کی حاضری یقینی ہو گی اور ادویات کی خردبرد کا خاتمہ ہو گا، ہسپتالوں میں جدید انفارمیشن سسٹم کو ہر صورت لاگو کریں گے، شعبہ طب سے وابستہ افراد سے درخواست ہے کہ وہ اسے قبول کریں،انصاف کی فراہمی کے بغیر کوئی معاشرہ آگے نہیں بڑھ سکتا ، پنجاب حکومت نے سماجی و معاشی انصاف یقینی بنانے کیلئے انقلابی اقداما ت کئے ہیں ۔

انہوں نے کہا کہ نیب کی پلی بارگین فراڈ ہے اور ڈکٹیٹر جنرل پرویز مشرف نے جمہوریت پر شب خون مارا اور اقتدار پر قبضہ کیا ۔ پلی بارگین اسی کا دیا ہوا نظام تھا اسی لئے اس کے بارے میں بات نہیں کی جاتی۔ بیک ڈور سے غلط عمل کو جائز قرار دینا کسی صورت مناسب نہیں ۔ انہوں نے کہا کہ مہذب معاشروں میں پلی بارگین موجود ہے تا ہم وہاں کرپشن کرنے والوں کو سزا ملتی ہے اور جیلوں میں بھی جانا پڑتا ہے۔پلی بارگین کے ذریعے اربوں کھربوں کے غبن کرنے والوں سے چند کوڑیاں وصول کی جاتی ہیں اور اس حوالے سے بلوچستان کیس کی مثال ہمارے سامنے موجود ہے۔ پلی بارگین کے اس نظام کا خاتمہ وقت کی ضرورت ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ