بھارت نواز حکومتیں سقوط ڈھاکہ کو بھلا دینا چاہتی ہیں، حافظ نعیم

145

 

جماعت اسلامی کراچی کے امیر حافظ نعیم الرحمن نے کہا ہے کہ بھارت نواز حکومتیں سقوط ڈھاکہ کے واقع کو بھلا دینے چاہتی ہیں ، نظریہ پاکستان کو سمجھنے والے 16دسمبرکے واقع کو سیاہ دن کے طور پر ہمیشہ یاد رکھیں گے ۔

محبان وطن سیل کے تحت سقوط ڈھاکہ کے حوالے سے منعقدہ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے امیر جماعت اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمن کا کہنا تھا کہ پاکستان سے محبت کرنے والے محب وطن بنگلہ دیش اور پاکستان میں آج بھی نظریہ اسلام کے لیے قربانیاں دے رہے ہیں ۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان کے لیے ہجرت کرنے والوں کے لیے آج تک شہریت کے سوالا ت اٹھائے جاتے ہیں ،کراچی میں بسنے والے 30لاکھ محب وطن بنگالی تیسرے درجے کے شہری کی زندگی گزاررہے ہیں جبکہ بنگلہ دیش میں پاکستان سے محبت کی پاداش میں آج بھی مطیع الرحمن نظامی ،ملا عبد القادر شہید اور دیگر عظیم لیڈر پھانسیوں کے پھندے قبول کررہے ہیں۔

مقررین نے کہا کہ 42سال سے پاکستان میں رہنے والی بنگالی اگر پاکستانی شہری نہیں تو کون ہیں؟ کراچی میں رہنے والے 30لاکھ محب وطن بنگالیوں کے رشتہ دار و لواحقین جو کہ بنگلہ دیش میں مقیم ہیں لاکھوں کی تعداد میں موجود ہیں پاکستان سے ایک کلمہ کی بنیادپر محبت رکھتے ہیں ۔ ضرورت اس بات کی ہے کہ پاکستان میں موجود بنگالیوں کو شہریت کے حوالے سے مکمل شہری حقوق فراہم کیے جائیں اور اس کے لیے فوری طور پر آئینی تقاضے پورے کیے جائیں اور قانون سازی کی جائے ۔

اس مو قع پر مقررین نے شام اور برما کے مسلمانوں پر ڈھائے جانے والے مظالم کے خلاف اتوار یکم جنوری کو شاہراہ قائدین پر ہونے والے ’’امت رسولؐ مارچ ‘‘ کو وقت کی اولین ضرورت قرار دیا اور عوام سے اپیل کی کہ وہ مارچ میں بڑی تعداد میں شریک ہوں ۔

اس موقع پر جماعت اسلامی کراچی ڈپٹی سکریٹری سیف الدین ایڈوکیٹ ، محب وطن سیل کے کنوینر شہزاد مظہر ، ہیومن رائٹس نیٹ ورک کراچی کے صدر انتخاب عالم سوری ، روہنگیا ویلفیئر کے سکریٹری ذبیح اللہ اور پی ایم اے کے رہنما عبد الغنی اور امید ویلفیئر ڈویلپمنٹ کے ساجد عثمانی اور نذر الاسلام اکیڈمی کے جاوید بخاری ایڈوکیٹ نے بھی خطاب کیا ۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ