مقبوضہ کشمیر، ہڑتال اور بھارت مخالف مظاہرے

132

مقبوضہ کشمیرمیں مسلمانوں کی آبادی کے تناسب کو کم کرنے کیلئے غیر کشمیری ہندو پناہ گزینوں کو پشتنی سرٹیفکیٹس دینے کے کٹھ پتلی انتظامیہ کے اقدام کیخلاف مکمل ہڑتال کی گئی اور بھارت مخالف مظاہرے کئے گئے۔

کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق ہڑتال اورمظاہروں کی کال کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین سید علی گیلانی اورحریت رہنماؤں میر واعظ عمر فاروق اور محمد یاسین ملک پر مشتمل متحدہ مزاحمتی قیادت نے دی تھی ۔تمام دکانیں اور تجارتی مراکز بند رہے جبکہ سڑکوں پر ٹریفک معطل رہی ۔

لوگوں نے سرینگر ، بڈگام ، گاندر بل، کولگام ، اسلام آباد، پلوامہ ، ترال ،شوپیاں ، بارہمولہ ، پٹن ، پلہالن ، سوپور، کپواڑہ، بانڈی پور اور دیگر علاقوں میں سڑکوں پر نکل کر پاکستان اور آزادی کے حق میں اور بھارت کے خلاف نعرے بلند کئے۔ انہوں نے پاکستانی جھنڈے بھی لہرائے۔ مظاہروں کی قیادت حریت رہنماؤں میرواعظ عمر فاروق، محمد یاسین ملک اور راجہ معراج الدین کلوال نے کی۔ بھارتی پولیس نے مختلف علاقوں میں مظاہرین کو منتشر کرنے کے لئے آنسو گیس اور لاٹھی چارج کا بے دریغ استعمال کیا جس سے متعدد افراد زخمی ہوئے۔

پولیس نے محمد یاسین ملک کو اس وقت گرفتار کر لیا جب انہوں نے سرائے بالا میں مسجد دستگیر صاحب میں نماز جمعہ کی ادائیگی کے بعد اپنے دیگر ساتھوں کے ہمراہ لالچوک کی طرف احتجاجی مارچ کی کوشش کی۔ کٹھ پتلی انتظامیہ نے سید علی گیلانی ، آسیہ اندرابی اور جاوید احمد میر کو مظاہروں کی قیادت سے روکنے کے لیے گھروں میں مسلسل نظر بند رکھا ۔

بھارتی پولیس نے نام نہاد کشمیر اسمبلی کے رکن انجینئر عبدالرشید کو ا س وقت حراست میں لے لیا جب انہوں نے غیر کشمیری مہاجرین کو ڈومیسائل سرٹیفکیٹس کے اجراء کے خلاف سرینگر میں کٹھ پتلی وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی کی رہائش گاہ کے باہر احتجاجی دھرنا دیا ۔ آزادی پسند رہنماؤں مختار احمد وازہ ، غلام محمد خان سوپوری ، محمد یوسف نقاش ، حکیم عبدالرشید ، ظفر اکبربٹ، فاروق توحید ی اور جماعت اسلامی مقبوضہ کشمیرنے اجتماعات سے خطاب اور بیانات میں کہاکہ کشمیری بھارت کے ہرکشمیر مخالف اقدام کو ناکام بنا دیں گے ۔

کشمیر تحریک خواتین کی سربراہ زمردہ حبیب نے سرینگر میں بھارتی سول سوسائٹی کے وفد سے ملاقات میں کہاکہ کشمیری عوام اپنے ناقابل تنسیخ حق ، حق خودارادیت کے حصول کیلئے جدوجہد آزادی جاری رکھے ہوئے ہیں۔برمنگھم میں کشمیر کنسرن برطانیہ کے زیراہتمام منعقدہ ایک تقریب کے مقررین نے مقبوضہ کشمیر کے عوام پر بھارتی مظالم پر شدید تشویش ظاہر کی ۔ مقررین میں پروفیسر نذیر احمد شال ، ذاکر اللہ، فضل احمد قادری ، فہیم کیانی ، چوہدری خادم حسین اور محمد غالب شامل تھے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ