مارگلہ نیشنل ہلز پارک میں کوئی سٹون کرشر کام نہیں کررہا،زاہد حامد

101

وفاقی وزیر قانون و موسمیاتی تبدیلی زاہد حامد نے کہا ہے کہ حکومت نے ماحول کے تحفظ کے لئے خصوصی اقدامات کئے ہیں‘ مارگلہ نیشنل ہلز پارک کے علاقے میں کوئی سٹون کرشر کام نہیں کر رہا‘ بفر زون کے علاقے میں جنگلات کے تحفظ کو یقینی بنایا جائے گا‘ سی ڈی اے کی اجازت کے بغیر کوئی ہاﺅسنگ سکیم بھی شروع نہیں کی جاسکتی۔

بدھ کو ایوان بالا کے اجلاس میں سینیٹر طاہر حسین مشہدی کے توجہ دلاﺅ نوٹس کے جواب میں وزیر قانون و موسمیاتی تبدیلی زاہد حامد نے کہا کہ 18ویں ترمیم کے بعد جنگلات کا شعبہ صوبوں کو منتقل ہو چکا ہے تاہم مارگلہ ہلز نیشنل پارک کا تعلق اسلام آبادسے ہے۔ انہوں نے کہا کہ مشترکہ مفادات کونسل نے اصولی طور پر فاریسٹ پالیسی کی منظوری دیدی ہے۔ جس پر اب عمل کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت نے ماحول کے تحفظ کے لئے خصوصی اقدامات کئے ہیں۔ ماحولیات کے تحفظ کے ادارے نے پارک کی حدود میں تمام سٹون کرشرز کو نوٹس جاری کئے۔ اس وقت مارگلہ ہلز نیشنل پارک کے علاقے میں کوئی سٹون کرشر کام نہیں کر رہا اوریہ پنجاب کے دیگر علاقوں میں منتقل ہو چکے ہیں۔

انہوں نے کہاکہ بفر زون کے علاقے میں جنگلات کے تحفظ کو یقینی بنایا جائے گا۔ سی ڈی اے کی اجازت کے بغیر کوئی نئی ہاﺅسنگ سکیم بھی شروع نہیں کی جاسکتی۔ سیاحت کو فروغ کیلئے اقدامات کئے جارہے ہیں۔ نئی سڑکوں کی تعمیر بند ہے اور صرف مرمت کا کام کیا جارہا ہے۔سپریم کورٹ نے بھی اس کا ازخود نوٹس لیا اور احکامات صادر کئے۔ انہوں نے کہا کہ ماحول کے تحفظ کے لئے تمام قانونی تقاضوں پر عملدرآمد کے ساتھ ساتھ عدالتی احکامات پر بھی عمل کیا جارہا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ