بھارت کی طرف سے دریائے چناب کے پانی میں مزید کمی

102

سندھ طاس معاہدہ کی خلاف ورزی کرتے ہوئے بھارت کی طرف سے دریائے چناب کے پانی میں مزید کمی کردی گئی ہے اور ہیڈمرالہ کے مقام پر دریائے چناب کا پانی انتہائی کم سطح پر پہنچ گیا ہے اور دریا کے خشک ہونے کا سلسلہ جاری ہے ۔

محکمہ ایری گیشن کے مطابق سندھ طاس معاہدہ کے تحت بھارت روزانہ 55ہزار کیوسک پانی دریائے چناب میں چھوڑنے کا پابند ہے لیکن اب دریائے چناب میں پانی کی آمد صرف چار ہزار آٹھ کیوسک سے بھی کم ہوکر تین ہزار آٹھ سو نو ے کیوسک رہ گئی ہے جبکہ دریائے چناب میں ہیڈمرالہ کے مقام پردریائے چناب ، دریائے مناورتوی اور دریائے جموں توی کا مجموعی پانی کی آمد پانچ ہزار64کیوسک ہے جس میں دریائے جموں توی کا چھ سو اکہتر کیوسک پانی اور دریائے مناور توی کا پانچ سو تین کیوسک پانی بھی شامل ہے۔

محکمہ ایری گیشن کے مطابق پانی کی کمی کی وجہ سے نہر مرالہ راوی لنک بند ہے اور دوسری نہر اپر چناب میں پانچ ہزار چونسٹھ کیوسک پانی ہے ۔ دریائے چناب میں پانی کی شدید کمی کی وجہ سے دریائے چناب خشک ہوچکا ہے اور اس کا چار فیصد حصے میں پانی موجود ہے اور باقی دریا خشک ہوچکا ہے اور پانی کی کمی کی وجہ سے لاکھوں ایکٹر زرعی رقبہ پر کاشت شدہ فصلوں کو نقصان پہنچ رہا ہے ۔کسانوںا ور کاشتکاروں نے بھارت کی طرف سے پانی روکے جانے کا معاملہ عالمی عدالت میں لے جانے کا مطالبہ کیا ہے ۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ