بھارتی وزیر داخلہ دھمکی آمیز بیان قابل مذمت ہے،میاں مقصوداحمد

111

امیر جماعت اسلامی پنجاب میاں مقصود احمدنے کہاہے کہ بھارتی وزیر داخلہ کی جانب سے پاکستان کے دس ٹکڑے کرنے کی دھمکی انتہائی قابل مذمت اور باعث تشویش ہے۔ہندوستان سے آنے والی مسلسل دھمکیوں کاجب تک پاکستان کی طرف سے منہ توڑ جواب نہیںدیاجاتابھارتی حکمران شرانگیزیوں سے باز آنے والے نہیں۔پاکستان ایک ایٹمی اور مضبوط دفاع رکھنے والی ریاست ہے۔ہماری امن کی خواہش کو کمزوری سمجھنے والوں کو منہ توڑجواب دینے کاوقت آگیا ہے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے لاہور میں عوامی وفود سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے کہاکہ اس وقت بھارت کے اندر علیحدگی پسند متعددتحریکیں چل رہی ہیں اور انشاء اللہ پاکستان تو قائم رہے گا مگر ہندوستان خودکئی ٹکڑوں میں تقسیم ہوجائے گا۔

انہوں نے کہاکہ پاکستان ایک حقیقت اور ناقابل تسخیر ملک ہے۔اس کی طرف میلی آنکھ سے دیکھنے والے نشانہ عبرت بن جائیں گے۔نریندرمودی کی حکومت کی انتہاپسندانہ پالیسیوں کی وجہ سے ہندوستان میں اقلیتوں سمیت غیر ملکی سیاح تک محفوظ نہیں۔بھارتیہ جنتاپارٹی کی اپنی پالیسیاں ہی انڈیاکوتقسیم کرنے کے لیے کافی ہیں۔خطے میں چوہدراہٹ کاخواب دیکھنے والابھارت دہشت گردوں کی مالی معاونت اور ان کی عسکری تربیت کررہا ہے۔

میاں مقصود احمد نے مزیدکہاکہ بھارت پاکستان دشمنی میں بالکل اندھا ہوچکا ہے۔اسلحہ کے ذخائر جمع کرکے وہ خطے میں عدم توازن پیداکرنے کی کوشش کررہا ہے۔عالمی برادری اور اقوام متحدہ ہندوستان کی گھنائونی سازشوں کا نوٹس لیں۔انہوں نے کہاکہ انڈین نیوی کے حاضرسروس افسر کل بھوشن یادیو اور دیگر بھارتی جاسوسوں کی گرفتاریاں اس بات کا ثبوت ہیں کہ بھارت پاکستان میں مداخلت کررہا ہے۔

انہوں نے کہاکہ پاکستان کی سیاسی وعسکری قیادت متحدہوکر بھارتی حکمرانوں کی گیڈربھبھکیوں کابھرپوراندازمیں جواب دے،پاکستانی عوام ملک کے تحفظ اور سلامتی کے لیے ان کے ساتھ کھڑے ہیں۔میاں مقصوداحمد نے مطالبہ کیاکہ سمجھوتہ ایکسپریس اور گجرات فسادات کی آڑ میں 2000مسلمانوں کاقتل عام کرنے والوں اور ان کی پشت پناہی کرنے والوں کو کڑی سزائیں دی جانی چاہئیں۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ