جماعت اسلامی کی سیاست کا محور اللہ کی زمین پر اللہ کا قانون نافذ کرناہے،پروفیسرابراہیم

159

سندھ ورکرز کنونشن کے دوسرے دن چھٹے سیشن کی صدارت نائب امیر جماعت اسلامی پاکستان سابق سینیٹر پروفیسر محمد ابراہیم نے کی۔اس کا موضوع “نوجوانوں کی قوت سے مظلوموں کی مدد” تھا۔ جس سے جماعت اسلامی سابق رکن قومی اسمبلی میاں محمد اسلم،جماعت اسلامی یوتھ کے صد زبیر احمد گوندل ،اسلامی جمعیت طلبہ پاکستان کے ناظم اعلیٰ صہیب کاکا خیل ، جمعیت طلبہ عربیہ پاکستان کے منتظم اعلیٰ عبید الرحمن عباسی اور دیگر نے خطاب کیا۔اس سیشن میں سندھ میں تعلیم کی ابتر صورتھال ، انتخای کرپشن کے کاخاتمے اور شفاف انتخابی عمل کو یقینی بنانے کے حوالے سے قراردادیں منظور کی گئیں ۔

پروفیسر ابراہیم نے”مظلوموں کے لیے جماعت اسلامی کی آئینی جدوجہد” کے موضوع پر صدارتی خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جماعت اسلامی نے ملک میں سیاسی اور آئینی محاذ پر بھی مثالی جدوجہد کی ہے اور اس میں اللہ تعالیٰ کی حاکمیت ، عوام کے حقوق اور مظلوموں اور محروموں کی دادرسی کو ہمیشہ فوقیت دی ہے ، جماعت اسلامی کی دعوت کا بنیادی مرکز و محور یہی ہے کہ اللہ کی زمین پر اللہ کا قانون نافذ کرنا ہے اور بندوں کو بندوں کی غلامی سے نجات دلانا ہے ۔ اللہ کے قانون کے نہ ہونے کی وجہ سے کچھ لوگ نعوذ باللہ خدا بن جاتے ہیں اور محروموں اور مظلوموں پر حکمرانی کرنے لگتے ہیں یہ ملک اسلام کے لیے بنا تھا اور اسلام ہی اس کی بقا کی ضمانت ہے ۔ ملک کا سب سے پہلا دستور ہی 1956ءمیں بنا اور موجود ہ دستور 1973ءمیں بناجو کئی ترمیموں کے ساتھ آج نافذ العمل ہے ۔ یہ دستور اسلام کے خلاف قانون سازی کو روکتا ہے اگر اس دستور پر پوری طرح عمل ہوجائے تو عوام اور ملک کی حالت بدل سکتی ہے۔

18-mian-aslam

میاں محمد اسلم نے کہا کہ جماعت اسلامی ہر تعصبات سے پاک جماعت ہے اور بلاامتیاز عوام کی خدمت پر یقین رکھتی ہے ۔الیکشن میں کامیابی حاصل کرنے کے لیے موثر تنظیم و تحریک اور بھرپور تیاری اور حکمت عملی کی ضرورت ہوتی ہے ۔الیکشن 2018ءہمارے لیے بہت بڑا چیلنج ہے ۔عوام سے رابطہ مضبوط اور مستحکم کرنا ہوگا۔

17-zubair-gondal

زبیر احمد گوندل نے کہا کہ جماعت اسلامی یوتھ ملک کے نوجوانوں کے لیے ایک موثر اور مضبوط پلییٹ فارم ہے اور ملک کی کل آبادی میں 65فیصد نوجوان ہیں جن کے اندر پوٹینشل موجود ہے بس اسے درست سمت دینے اور اس کی رہنمائی کرنے کی ضرورت ہے ۔ نوجوانوں کو شعور دینے ار منظم کرنے کی ضرورت ہے ۔ جماعت اسلامی یوتھ ملک میں تبدیلی کے عمل میں ہر اول دستے کا کردار ادا کرے گا ۔

19-suhaib-kaka-khail

صہیب کاکا خیل نے کہا کہ پاکستان کے اندر تعلیمی نظام کو ایک سازش کے تحت تباہ کیا جارہا ہے ، نوجوانوں کے اندر مایوسی اور ناامیدی پیدا کی جارہی ہے ۔حکمرانوں نے تعلیم کو بھی اپنی ترجیحات میں نہیں رکھا ہے ۔ہمارا مطالبہ ہے کہ وفاقی صوبائی حکومتیں تعیم کے بجٹ میں خاطرخواہ اضافہ کریں اگر ملک کے اندر سے کرپشن ختم کردی جائے اور قوم کی لوٹی ہوئی دولت واپس ہوجائے تو ملک کے ہر بچے کو تعلیم مفت فراہم کی جاسکتی ہے ۔

عبید الرحمن عباسی نے کہا کہ دینی مدارس میں 30 لاکھ سے زیادہ طلبہ زیر تعلیم ہیں جن کا عزم اور عہد ہے کہ ملک کے اندر لبرل اور سیکولر پالیساں چلانے والوں اور ملک کے دینی اور نظریاتی تشخص کو پامال کرنے والوں کی سازشوں کو ہرگز کامیاب نہیں ہونے دیا جائے گا۔ منبر و محراب کی قوت اور اثر سے عوام اور نوجوانوں کو منظم اور متحرک کیا جائے گا اور ملک کی سلامتی اور تحفظ کو یقینی بنایاجائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے آباؤاجداد نے اسلامی نظام کے قیام کے لیے یہ ملک حاصل کیا تھا ہم اس نظریے کو کبھی فراموش نہیں کرسکتے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ