بھارتی سپریم کورٹ نے مودی حکومت کی اپیل مسترد کردی

134

بھارتی سپریم کورٹ نے ہائی کورٹس کونوٹوں کی منسوخی کے فیصلے سے پیدا شدہ مسائل پر مقدمات کی سماعت سے باز رکھنے کے لئے مودی حکومت کی اپیل مسترد کردی۔

بھارتی سپریم کورٹ نے کہا ہے کہ حکومت کے اس فیصلہ (نوٹوں کی منسوخی) سے عوام بری طرح متاثر ہوئے ہیں اور گڑبڑ اور ہنگاموں کا سبب بننے والی صورتحال میں عوام پر عدالتوں کے دروازے بند نہیں کئے جاسکتے۔حکومت نے نوٹوں کی منسوخی کے مقدمات کی ہائیکورٹس میں سماعت کو روکنے کیلئے اپیل کی تھی اور استدلال پیش کیا تھا کہ صورتحال میں اب کہیں زیادہ بہتری ہوئی ہے اور طویل قطاریں تھم رہی ہیں نیز رقمی معاملات میں ڈیجیٹل طریقہ کار کے استعمال میں زبردست اضافہ ہوا ہے۔

بھارتی سپریم کورٹ کا کہنا تھا کہ حکومت نے یہ بھی دعویٰ کیا تھا کہ نوٹوں کی منسوخی کا اقدام کامیاب ثابت ہوا ہے کیونکہ تاحال چھ لاکھ کروڑ روپے بینکوں میں جمع ہوچکے ہیں اور دسمبر تک خزانہ میں 10 لاکھ کروڑ روپے جمع ہوں گے جس سے کالے دھن کی ذخیرہ اندوزی کا خاتمہ ہوگا لیکن بھارتی حکومت کے یہ دعوے ان کی سپریم کورٹ کو متاثر کرنے میں ناکام ہوگئے۔ بھارتی حکومت کو یہ ایک اور دھچکا لگا ہے کیونکہ بھارتی عدالت عظمیٰ نے بھی 18 نومبر کو حکومت کی ایک درخواست قبول کرنے سے انکار کردیا تھا، جس میں کہا گیا تھا کہ نوٹوں کی منسوخی کیلئے 8 نومبر کو کئے گئے فیصلہ کو چیلنج کرتے ہوئے ہائی کورٹس میں دائر کی جانے والی درخواستیں قبول کرنے کی اجازت نہ دی جائے۔

سپریم کورٹ نے کہا کہ اس فیصلہ (نوٹوں کی منسوخی) سے عوام بری طرح متاثر ہوئے ہیں اور گڑبڑ اور ہنگاموں کا سبب بننے والی صورتحال میں عوام پر عدالت کے دروازے بند نہیں کئے جاسکتے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ