آرمی چیف نے الوداعی دوروں اور ملاقاتوں کا آغاز کردیا

129

پاک فوج کے سپہ سالار جنرل راحیل شریف نے عہدے سے ریٹائرمنٹ سےچند روزقبل الوداعی دوروں کا آغاز کردیا۔

پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر سے جاری بیان کے مطابق آرمی چیف جنرل راحیل شریف نے الوداعی دورے شروع کردیے ہیں اور وہ اس سلسلے میں لاہور پہنچے جہاں انہوں نے گیریژن میں فوج اور رینجرز کے افسران اور جوانوں سے ملاقاتیں کیں۔آرمی چیف نے دورے کے دوران فوجیوں کے بڑے اجتماع سے بھی خطاب کیا۔انہوں نے کہا کہ ملک میں امن اوراستحکام کا قیام آسان کام نہیں تھالیکن قربانیوں اورمشترکہ قومی عزم سے کامیابیاں ملی ہیں۔

واضح رہے کہ موجود آرمی چیف اپنی مدت ملازمت پوری ہونے پر 29نومبر کو ریٹائر ہورہے ہیں اور ان کی جگہ نئے آرمی چیف 29نومبر کو ہی پاک فوج کی کمان سنبھالیں گے۔

coas-during-farewell-visit-to-lahore-garrison-2

جنرل راحیل شریف کے جانشین کے انتخاب کے حوالے سے حکومت نے اب تک باضابطہ طور پر غور شروع نہیں کیا لیکن اس معاملے سے واقف حکام کا کہنا ہے کہ حکومت نے سال کے آغاز سے ہی اس معاملے پر مشاورت شروع کررکھی ہے۔

پاک فوج کے سینئر افسران کی فہرست بہت حد تک واضح ہے، چیف آف جنرل اسٹاف لیفٹیننٹ جنرل زبیر حیات سینیئر ترین افسر ہیں اور ان کے بعد کور کمانڈر ملتان، لیفٹیننٹ جنرل اشفاق ندیم احمد، کور کمانڈر بہاولپور لیفٹیننٹ جنرل جاوید اقبال رمدے اور انسپکٹر جنرل ٹریننگ اینڈ ایویلیو ایشن لیفٹیننٹ جنرل قمر جاوید باجوہ ہیں۔

جنرل زبیر اور جنرل اشفاق کے درمیان دو اور جنرلز بھی ہیں ، ایک ہیوی انڈسٹریل کمپلیکس ٹیکسلا کے چیئرمین لیفٹیننٹ جنرل سید واجد حسین اور دوسرے ڈائریکٹر جنرل جوائنٹ اسٹاف لیفٹیننٹ جنرل نجیب اللہ خان، تاہم یہ دونوں افسران آرمی چیف کے عہدے کے لیے تکنیکی طور پر اہل نہیں کیوں کہ انہوں نے کسی کور کی کمانڈ نہیں کی ہے۔

جو چار جنرلز آرمی چیف کے عہدے پر ترقی پانے کے اہل ہیں ان تمام کا تعلق پاکستان ملٹری اکیڈمی کے 62 ویں لانگ کورس سے ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ