وز?راعظم نواز شر?ف ?? ?رغز ?م منصب ت?مر سر?وف س? ون آن ون ملاقات

76

پاکستان اور کرغزستان نے توانائی کے شعبے اور علاقائی رابطہ میں تعاون کو وسعت دینے پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے تجارت، معیشت، عوامی سطح پر روابط اور سیاحت سمیت مختلف شعبہ جات میں اپنے دوطرفہ تعلقات کو مزید بہتر اور مستحکم بنانے پر اتفاق کیا ہے۔

وزیراعظم محمد نواز شریف نے جمعرات کو یہاں اپنے کرغزہم منصب تیمر سریوف کے ساتھ ون آن ون ملاقات اور وفود کی سطح پر مذاکرات کے بعد میڈیا کو بتایا کہ ہمارے دوطرفہ تعلقات بہترین ہیں، ہم نے اپنے اقتصادی تعلقات، عوامی سطح پر روابط، سیاحت اور توانائی کو مزید بہتر بنانے پر اتفاق کیا ہے۔ دونوں رہنماﺅں نے مختلف شعبوں میں تعلقات کو مزید مضبوط بنانے کے لئے مفاہمت کی یادداشتوں پر دستخط بھی کئے۔ وزیراعظم محمد نواز شریف نے کہا کہ پاکستان اور کرغزستان کے تعلقات میں تیزی سے بہتری جاری ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ تعلقات باہمی احترام، مشترکہ عقیدہ، مشترکہ مفادات پر مبنی ہیں، ہمارے درمیان خوشگوار تعلقات ہیں اور دونوں ممالک اہم علاقائی اور عالمی ایشوز پر یکساں موقف رکھتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے درپیش مشترکہ چیلنجوں سے متعلق ایشوز اور دستیاب مواقع پر جامع مشاورت کی۔ انہوں نے کہا کہ دونوں ممالک توانائی استحکام، انسداد دہشت گردی، منشیات کی سمگلنگ، انتہا پسندی، تجارت، معاشی تعاون اور علاقائی یکجہتی سمیت جامع ایشوز پر مشترکہ مفادات رکھتے ہیں۔

وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان کرغزستان کے ساتھ تعاون کے تمام شعبوں میں تعلقات کو مزید مضبوط اور وسیع بنانا چاہتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بات چیت کے دوران کرغز وزیراعظم اور میں نے دوطرفہ تعلقات کے تمام اہم پہلوﺅں کاجائزہ لیا، ہم نے پاکستان اور کرغزستان کے درمیان اعلیٰ سطحی دوروں سمیت باقاعدہ سیاسی تبادلوں کی ضرورت پر توجہ دی۔ وزیراعظم نے کہا کہ دونوں ممالک نے تجارت اور سرمایہ کاری میں اضافہ، انفراسٹرکچر کی بہتری، سڑکوں اور ریل رابطوں کی تعمیر اور توانائی کے شعبوں میں تعاون میں بھرپور انسانی اور معدنی وسائل سے مکمل استفادہ کا جائزہ لیا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان اور کرغزستان نے توانائی کے منصوبوں پر تیزی سے پیش رفت کی ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے کہا کہ یہ بات اطمینان بخش ہے کہ کاسا 1000 کے پراجیکٹ کے حوالے سے تمام اہم معاہدے طے پا گئے ہیں۔

وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان کی اقتصادی ترقی کا انحصار کاسا 1000 پراجیکٹ کی بجلی پر ہے جس سے پاکستان کی توانائی کی قلت دور کرنے میں مدد مل سکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں اس پراجیکٹ پر اجتماعی طور پر جلد از جلد کام کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان مواصلاتی روابط کے جامع نیٹ ورک کا فروغ چاہتا ہے، ہم نے گوادر پورٹ اور پاک چائنہ اکنامک کوریڈور کی ترقی کے لئے اقدامات کئے جن سے علاقائی روابط کو سہولت ملے گی اور وسطی ایشیائی ریاستیں ہماری بندرگاہیں استعمال کر سکیں گی اسی طرح اس خطہ میں ہماری رسائی ہو گی۔ وزیراعظم نے کہا کہ کرغز ہم منصب کے ساتھ ملاقات کے دوران دونوں ممالک نے اقوام متحدہ، جی۔77، غیر وابستہ تحریک اور ای سی او جیسے عالمی فورمز پر تعاون کا جائزہ لیا۔ انہوں نے کہا کہ ہم اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی جامع اصلاحات کے لئے کرغزستان کے ساتھ قریبی تعاون سے کام کرنا چاہتے ہیں جس کے لئے تمام رکن ممالک کی امنگوں کو مدنظر رکھنا ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ استحقاق کے مزید مراکز قائم کرنے کی بجائے چھوٹے ممالک کے مفادات پر بالخصوص توجہ دی جانی چاہیے اور سلامتی کونسل کو مزید جمہوری بنانا چاہیے۔

وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان شنگھائی تعاون تنظیم کا رکن بننے کا خواہاں ہے اور اس سلسلے میں کرغزستان کی جانب سے تعاون قابل تعریف ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان اور کرغزستان کے درمیان مفاہمت کی یادداشتوں پر دستخط سے دونوں ممالک کے درمیان تعلقات مزید مستحکم بنانے میں مدد ملے گی۔ وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان کرغزستان کے شہریوں کو تربیتی کورس کی فراہمی جاری رکھے گا، فارن سروس اکیڈمی اسلام آباد میں 60 سے زائد نوجوان اور مڈ کیریئر سفارتکاروں کو تربیت دی گئی ہے جبکہ بینکاری، ڈاک اور دیگر شعبوں کے لئے بھی تربیت کی پیشکش ہے۔ انہوں نے کہا کہ مشترکہ اقدار اور کمٹمنٹ سے علاقائی تعاون میں اضافہ ہو گا جو پاکستان اور کرغزستان کے درمیان قریبی برادرانہ تعلقات کو یقینی بنائے گا۔

انہوں نے کہا کہ مجھے کرغزستان کے دورے پر بہت خوشی ہوئی ہے جو آزادی کے وقت سے ہمارا انتہائی قریبی دوست ہے۔ انہوں نے اپنے انتہائی پرتپاک استقبال اور فیاضانہ مہمان نوازی پر کرغز عوام اور حکومت سے اظہار تشکر کیا۔ وزیراعظم نے کہا کہ وہ کرغزستان کی ثقافت سے بہت متاثر ہوئے ہیں اور کرغزستان کی مدبرانہ قیادت کے تحت ہونے والی ترقی اور خوشحالی کی تعریف کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ میں کرغزستان کے بھائی بہنوں کے لئے پاکستان کے عوام کی نیک تمناﺅں کا اظہار کرتا ہوں۔

Print Friendly, PDF & Email
حصہ